موصل میں داعش مغربی علاقوں میں مقید

عراقی کرد فوج نے داعش کو موصل میں ہتھیاروں کی سپلائی کرنے والے اہم ترین روٹ کو بند کر دیا۔ موصل کا نواحی قصبہ بیشاک  پہلے القاعدہ اور اب داعش کی معاونت کے لئے مشہور تھا۔

تاہم کرد فوج بیشاک کے وسط تک پہنچ گئی ہے جس سے  موصل کے وسطی علاقوں میں داعش کو ہتھیاروں کی سپلائی ختم ہو گئی۔

شہر پر قبضے کی لڑائی پیر کو شروع ہوئی جس میں کرد آرٹلری نے اہم ترین کردار ادا کیا اور منگل کو بیشاک پر قبضہ کر لیا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق قصبے میں ابھی بھی دو تین مقامات پر لڑائی جاری ہے۔

الجزیرہ کے مطابق سڑکوں پر اب بھی لڑائی  ہو رہی ہے۔ امریکی فضائیہ کی جانب سے بھی بمباری ہوئی۔ تاہم بیشاک میں چند درجن داعش کے جنگجوؤں کے علاوہ تمام لوگ علاقہ خالی کر چکے ہیں۔

کرد فوج کے ترجمان گردی کے مطابق شہریوں کی حفاظت اولین ترجیح ہے، اس وجہ سے آپریشن میں کوئی تیزی نہیں دکھائی جا رہی۔ داعش نے شہر میں سرنگیں قائم کر رکھی تھیں جن کو کلیئر کیا جا رہا ہے۔ انہیں سرنگوں کی مدد سے موصل کے وسط میں ہتھیار سپلائی کیے جا رہے تھے۔

عراقی اور کرد فوج کے مشترکہ آپریشن کی وجہ سے مشرقی موصل کے علاوہ دوسرے مقامات پر بھی محاذ  کھول دیئے گئے ہیں۔ بیشاک پر قبضہ داعش کے خلاف اہم  ترین فتح تصور کیا جا رہا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

x

Check Also

امریکا، ڈرون سے گردے کی اسپتال میں ڈیلیوری

ڈرون سے گردے کی اسپتال میں ڈیلیوری

امریکی شہربالٹی مورمیں ڈرون کی مدد سے ڈونر کا گردہ مریض تک پہنچا دیا گیا، ...

کتاب میں کسی کھلاڑی کی کردار کشی نہیں کی، آفریدی

کتاب میں کسی کھلاڑی کی کردار کشی نہیں کی، آفریدی

قومی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان شاہد آفریدی نے کہا ہے کہ انہوں نے اپنی ...

ماریا شراپوا اٹالین ٹینس سے دستبردار

ماریا شراپوا اٹالین ٹینس سے دستبردار

ٹینس پلیئر ماریا شراپووا کے فینز کیلئے بری خبر ، وہ اب تک کاندھے کی ...

%d bloggers like this: